Guest Author

کشمیری طلباء و طالبات کے نام (Kashmiri Talba-o-Talibat Kay Naam)

کشمیری طلباء و طالبات کے نام (Kashmiri Talba-o-Talibat Kay Naam)
Decrease Font Size Increase Font Size Text Size Print This Page

تمہارےجذبوں سے جام بھرلوں۔
ےپیارے طلبہ یہ کام کرلوں۔
تمہاری ہمت کو، حوصلوں کو۔
میں جان و دل سے سلام کرلوں۔
(Tumhare jazboun se jhaam bhar loun
Aay pyare talba yeh kaam kar loun
Tumhari hummat ko, hosloun ko
Main jaan-o-dil se salam kar loun)

نثار کردوں یہ جان تم پر۔
فدامیں کردوں جہان تم پر۔
دیاجووہ حوصلہ ہےتم نے۔
ظلم کی صُبح کوشام کرلوں۔
(Nisar kar loun yeh jaan tum per
Fida main kar doun jahan tum per
Diya jo woh hosla hai tum ne
Zulm ki Subuh ko shaam kar loun)

بچھاؤں پلکیں تمہاری راہ میں۔
عظیم ہوتم میری نگاہ میں۔
اُمیداس قوم کی جوتُم ہو۔
میں زندگی تیرےنام کرلوں۔
(Bichaoun palkain tumhari rah main
Azeem ho tum meri nigah main
Umeed is qoum ki jo tum ho
main zindagi tere naam kar loun)

تمہاری آنکھوں میں نوربھردوں۔
اندھیری راتوں کودُورکردوں۔
بناؤں تم کو صُبح کا تارا۔
سحرکایوں اہتمام کرلوں۔
(Tumhari aankhoun main noor bhar doun
Andheri ratoun ko door kar doun
Banaoun tum ko subuh ka tara
Seher ka youn ehtemaam kar loun)

بناؤں تم کو میں ماہِ کامل۔
کروں ستاروں میں تم کوشامل۔
میں دیکھتا رہتاجاؤں تم کو۔
زمیں پہ ایسےقیام کرلوں۔
(Banaoun tum ko main mah-e-kamil
Karoun sitaroun main tum ko shamil
Main dekhta rehta jaoun tum ko
Zameen pe aise qayaam kar loun)

اندھیری شب میں چراغ بن کر۔
جلاؤں اُسکومیں آگ بن کر۔
بچاؤں تم کو میں تِیرگی سے۔
اُسے تمہارا غلام کرلوں۔
(Andheri shab main charag ban kar
Jalaoun usko main aag ban kar
Bachaoun tum ko main teergi se
Usay tumhara ghulam kar loun)

مٹاؤں اب تیرےدشمنوں کو۔
سبق سکھاؤں میں ظالموں کو۔
لڑوں جہاں سےتمہاری خاطر۔
کہ تیغ میں بےنیام کرلوں۔
(Mitaoun ab tere dushmanoun ko
Sabaq sikhaoun main zaalimoun ko
Ladoun jahan se tumhari khatir
Ki’ teg main bay-niyaam kar loun)

Photo By: Eeshan Peer

بچاؤں تم کومیں ڈھال بن کر۔
خوشی تمہیں دوں ہلال بن کر۔
رُلاؤں میں تیرےدشمنوں کو۔
میں نیند اُن کی حرام کرلوں۔
(Bachaoun tumko main dhaal ban kar
Khushi tumhe doun hilal ban kar
Rulaoun main tere dushmanoun ko
Main neend unki haram kar loun)

یہ ظلم وجبروقہر کاسایہ۔
تمہارےاُوپریہ کیوں ہےچھایا۔
مٹاؤں خودکوبچاؤں تم کو۔
میں کام ظلم کا تمام کرلوں۔
(Yeh zulm-o-jabr-o-qaher ka saya
Tumhare ooper yeh kyun hai chhaya
Mitaoun khud ko bachaoun tumko
Main kaam zulm ka tamam kar loun)

کھڑےہو تم قاہروں کے آگے۔
ڈٹے ہو تم جابروں کےآگے۔
یہ جنگ جوکی شروع ہے تم نے۔
میں اُسکا اب اختتام کرلوں۔
(Khaday ho tum qahiroun k aagay
Datay ho tum jabiroun k aagay
Yeh jung jo ki hai shuru tum ne
Main uska ab ikhtitaam kar loun)

مٹاؤں تیرےعدوکوجس دم۔
فتح کا جس دم اُٹھاؤں پرچم۔
تمہاری آنکھوں کےآنسودھوکر۔
خوشی تمہاری دوام کرلوں۔
(Mitaoun tere udoo ko jis dum
Fateh ka jis dum uthaoun parchem
Tumhare aankhoun kay aansoun dho kar
Khushi tumhari dawam kar loun)

میری قوم کےابابِیل تُم۔
مٹانے چل پڑےعدوکےفِیل تُم۔
تمہارےہاتھوں کےپتھروں کو۔
میں چوم کراحترام کرلوں۔
(Meri qoum k aba-beel tum
Mitane chal pade a’doo kay feel tum
Tumhare hathoun kay patharoun ko
Main choom ker ehteraam kar loun)

پڑھاہے تم نےجو درسِ جراءت۔
سکھایاسب کوکہ کیاہےغیرت۔
بتایاجوبھی وہ کردکھایا۔
یہ بات مکتب میں عام کرلوں۔
(Padha hai tum ne dars-e-jurrat
Sikhaya sab ko ki’ kya hai gherat
Bataya jo bhi woh kar dikhaya
Yeh baat maktab main aam kar loun)

دکھایا دردِجگرجوتم نے۔
سہےزخم جوبدن پےتم نے۔
مجھے بھی ہمت دے میرےمولا۔
کہ حق کی خاطرکلام کرلوں۔
(Dikhaya dard-e-jigar jo tum ne
Sahay zakhm jo badan pe tum ne
Mujhe bhi himmat de mere Moula
Ki’ Haq ki khatir kalam kar loun)

بہت ستایاشبِ ستم نے۔
جلائی اب جویہ شمع تُم نے۔
نہ بُجھنےپائےیہ شمعِ حُریت۔
میں ایساکچھ انتظام کرلوں۔
(Bohut sataya shab-e-sittam ne
Jalayi ab jo yeh shama’ tum ne
Na bhujhne paye yeh shama’-e-Hurriyat
Main aisa kuch intezam kar loun)

فخرہےتم پراےنوجوانو۔
میرےوطن کےاےپاسبانو۔
دیاہےایساپیام تم نے۔
کہ عام تیراپیام کرلوں۔
(Fakhr hai tum per aay naujawano
Mere watan kay aay pasbano
Diya hai aisa payam tum ne
Ki’ aam tera payam kar loun)

مٹادیاہےغروراُسکا۔
جو چھیناتم نےسُروراُسکا۔
حجازی کی بھی یہی تمنا۔
عدوکومیں زیرِدام کرلوں۔
(Mita diya hai ghuroor uska
Jo chhayda tum ne suroor uska
Hijazi ki bhi yehi tamanna
U’doo ko main zayr-e-daam kar loun)

Poet is Software Engineer by profession. He is from North Kashmir and can be reached at waseemhijazihilal@gmail.com.

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *